جانور سے بدفعلی کرنا کیسا؟

Janwar se zina

یہ فعل بھی شریعت کو سخت ناپسند ہے جیسا کہ حضرت عمرو بن ابی عمرورضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ ﷺ کا فرمان ہے،” جو کسی جانور سے بدفعلی کرے، وہ ملعون ہے ۔ “
(مستدرک ،کتاب الحدود،رقم ۸۱۱۷،ج۵،ص۵۰۹)

اس کے بارے میں سخت سزا بیان کی گئی ہے چنانچہ حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے ارشاد فرمایا:” تم جس شخص کو کسی جانور سے بد فعلی کرتا پاؤ تو فاعل ومفعول دونوں کو قتل کر ڈالو۔“ حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے عرض کی گئی :” اس میں جانور کا کیا قصور ہے؟“ آپ نے فرمایا : ”میں نے رسول اللہ ﷺ سے اس بارے میں کوئی بات تو نہیں سنی لیکن میرا گمان ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے اسے ناپسند فرمایا کہ ایسے جانور کا گوشت کھایا جائے یا اس سے نفع اٹھایا جائے کہ جس کے ساتھ یہ عمل کیا گیاہو۔“
(ترمذی۔کتاب الحدود، باب ماجاء فیمن یقع علی البھیمۃ ،رقم۱۴۶۰،ج۳،ص۱۳۶)

2 تبصرے “جانور سے بدفعلی کرنا کیسا؟

    1. سب سے پہلے اس گناہ سے پکی سچی توبہ کریں۔ توبہ کا طریقہ میں نے پوسٹ کر دیا ہے۔ ملاحظہ فرما لیں۔
      مزید اس کے اسباب پر غور کریں کہ یہ گناہ مجھ سے کیوں سرزد ہو رہا ہے۔ بری صحبت کی وجہ سے، فلموں ڈراموں کی وجہ سے، انٹرنیٹ کے غلط استعمال کی وجہ سے یا بدنگاہی کی وجہ سے جو بھی سبب ہو اسکو فوراً دور کریں اور اچھی صحبت اختیار کریں۔ اپنے آپ کو نیک کاموں میں مشغول کریں۔ جب بھی گناہ کرنے کا دوبارا ذہن بنے تو فوراً وضو کر لیں۔ اور ہر وقت “لاحول” شریف کی کثرت کرتے رہیں انشاءاللہ اس عادت سے چھٹکارا حاصل ہو جائے گا۔ یاد رکھیں نفس و شیطان بھرپور کوشش کرے گا کہ آپ اس عادت سے چھٹکارا نہ حاصل کر پاؤ مگر آپ نے اپنے اس ارادے پر پختگی کے ساتھ قائم رہنا ہے۔
      مزید ایک اور بات کہ کھانا کم کھائیں کہ پیٹ بھر کھانے سے بھی شہوت کو فروغ ملتا ہے۔ سب سے بہتر یہ ہے کہ روزہ رکھنے کی عادت ڈال لیں کہ روزہ شہوت کا توڑ ہے۔ اگر آپ نے ابھی تک مشت زنی والی تحریر ملاحظہ نہیں فرمائی تو سب سے اسکو ملاحظہ فرمائیں اور ہر وقت اسکے عذاب و نقصانات کو پیش نظر رکھیں۔ اپنے آپ کو جتنا کرنے والے کاموں میں مشغول رکھیں گے اتنا نہ کرنے والے کاموں سے بچ پائیں گے۔
      اللہ پاک عمل کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔ آمین

اپنا تبصرہ بھیجیں