نماز کے فوائد

وُضو و نَماز بیماریوں سے بچاتے ہیں، نماز کے 21 بڑے فوائد

پیارے بھائیو! نماز میں جس طرح مصیبتوں کا علاج ہے اِسی طرح اِس میں بیماریوں کا بھی علاج ہے، خود طبیبوں کواِعتراف ہے کہ وضو کرنے والا شخص دماغی اَمراض میں بہت کم مبتلا ہوتا ہے، نمازی جنون[1]یعنی پاگل پن اور تلی[2]Spleenکی بیماریوں سے اکثر محفوظ رہتا ہے، نماز پڑھنے کے لیے دن میں کئی بار وُضو کرنے سے اعضا دُھلتے رہتے ہیں اورنمازی کپڑے بھی پاک صاف رکھتا ہے،اس لیے گندگیوں اور ناپاکیوں سے حفاظت رہتی ہے اور ظاہر ہے کہ گندگی بہت سی بیماریوں کی جڑ ہے۔ مزید نماز کے فوائد جانیئے:۔

نَماز میں شِفا ہے

حضرت ابو ہُریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ ایک بار میں نماز پڑھ کرسرکارِ مدینہ ﷺ کے پاس بیٹھ گیا، آپ ﷺ نے فرمایا: کیا تجھے پیٹ میں دَرد ہے؟ میں نے عر ض کی: جی ہاں ۔ فرمایا:

قُمْ فَصَلِّ، فَاِنَّ فِی الصَّلَاۃِ شِفَآءً۔

یعنی ’’اُٹھو اور نماز پڑھو کیونکہ نماز میں شِفا ہے۔‘‘[3]ابن ماجہ ج۴ص۹۸حدیث ۳۴۵۸

بیماریوں سے شفا وغیرہ کے متعلق 21 نماز کے فوائد[4]ابتدائی 6 ’’ابن ماجہ حاشیہ سندھی‘‘ جلد4صفحہ98 سے اور بقیہ’’ فیض القدیر‘‘ جلد4صفحہ689سے پیش کئے گئے ہیں

  1. نماز دل، معدہ اور آنتوں وغیرہ کے مرض میں شِفا دیتی ہے
  2. یہ دَرد و غم کا احساس بھلا دیتی یا کم کر دیتی ہے
  3. نماز میں بہترین ورزش ہے کہ اس کے قیام میں ، رکوع اور سجدے وغیرہ کرنے سے بدن کے اکثر جوڑ[5]Joints حرکت کرتے ہیں
  4. نزلہ زُکام کے مریض کیلئے طویل (یعنی لمبا) سجدہ نہایت مفید ہے
  5. سجدے سے بند ناک کھلتی ہے
  6. آنتوں میں جمع ہونے والے غیر ضروری مواد کو حرکت دے کرنکالنے میں سجدہ کافی مدد گار ثابت ہوتا ہے
  7. نماز سے ذِہن صاف ہوتا اور غصّے کی آگ بجھ جاتی ہے
  8. نماز رزق لاتی
  9. صحت کی حفاظت کرتی
  10. اذیت[6]یعنی تکلیف دور کر تی
  11. بیماری بھگاتی
  12. دل کی قوت بڑھاتی
  13. فرحت[7]یعنی خوشیکا سامان بنتی
  14. سستی دور کرتی
  15. شرحِ صدر کرتی یعنی سینہ کھولتی
  16. روح کو غذا فراہم کرتی
  17. دل منور[8]یعنی روشنکرتی
  18. چہرہ چمکاتی
  19. برکت لاتی
  20. خدائے رحمٰن سے قریب پہنچاتی اور
  21. شیطان کو دُور بھگاتی ہے۔

(یہ نماز کے فوائد اُسی صورت میں حاصِل ہو سکتے ہیں جب نماز اطمینان سے دُرست طریقے پر ادا کی جائے)

ثواب کی نیت سے شیئر کرتے جائیں۔۔
Share on Facebook
Facebook
Tweet about this on Twitter
Twitter
Share on Reddit
Reddit
Share on LinkedIn
Linkedin
Buffer this page
Buffer
Digg this
Digg
Share on Tumblr
Tumblr
Share on Yummly
Yummly
Share on VK
VK
Email this to someone
email

حوالہ جات   [ + ]

اپنا تبصرہ بھیجیں