ہیجڑے یا خواجہ سرا کی نماز جنازہ

ہیجڑے یا خواجہ سرا کی نماز جنازہ

کچھ لوگ ہیجڑے کی نماز جنازہ پڑھنے یا نہ پڑھنے کے بارے میں شک کرتے ہیں کہ پڑھنا جائز ہے یا نہیں۔ تو مسئلہ یہ ہے کہ ہیجڑہ یا خواجہ سرا اگر مسلمان ہے تو اس کی نماز جنازہ پڑھی جاۓ گی اور اس کو مسلمانوں کے قبرستان میں دفن کیا جاۓ گا۔

کچھ لوگ پوچھتے ہیں کہ ہیجڑے کی نماز جنازہ میں نیت اور اس میں جو دعا پڑھی جاۓ گی وہ مردوں والی ہو یا عورتوں والی؟ شاید ان لوگوں کو یہ معلوم نہیں کہ مردوں اور عورتوں کی نماز جنازہ اور اس کی نیت میں کوئی فرق نہیں دونوں کا طریقہ ایک ہی ہے اور وہی طریقہ ہیجڑے کے لیے بھی رہے گا۔

ہاں نا بالغ بچے اور بچی کی دعا میں فرق ہے اور وہ بہت معمولی ضمیروں کا فرق ہے تو اگر ہیجڑہ نابالغ بچہ ہو تو اس کے لیے لڑکے والی دعا پڑھ دیں یا لڑکی والی ہر طرح نماز درست ہو جاۓ گی۔(1)فتاوٰی رضویہ جدید 174/9،فتاوٰی بحرالعلوم 174/5

حوالہ جات[+]

اپنا تبصرہ بھیجیں