اخلاق مصطفیٰ ﷺ کو اپنائیں زندگی آسان بنائیں

اخلاق مصطفیٰ ﷺ کو اپنائیں زندگی آسان بنائیں

قرآن مجید فرقان حمید اللہ پاک کے احکام اور زندگی کے خوبصورت ضابطوں کو بیان کرتا ہے۔ ان ضوابطِ حیات اور قرآن پر عمل کے لیے ایک بہترین اور پیشوا زندگی وہ نبی پاک ﷺ کی مبارک حیات ہے۔

بالیقین حضور ﷺ کا اسوہ حسنہ ہر آدمی کے لیے مشعل راہ نجات ہے۔ اسی وجہ سے تو قرآن بھی فرماتا ہے:

لَقَدْ كَانَ لَكُمْ فِیْ رَسُوْلِ اللّٰهِ اُسْوَةٌ حَسَنَةٌ

ترجمہ: بیشک تمہارے لئےاللہ کے رسول میں بہترین نمونہ موجود ہے(1)سورة الأحزاب، آیت: 21

آج معاشرے کی بد تہذیبی اور بداخلاقی ہمیں بتاتی ہے کہ ہم اپنے نبی پاک ﷺ کے اسوہ حسنہ کی خوبصورت تعلیم سے کس قدر نا آشنا ہیں۔ اگر آپ کی عادات اور اخلاق کو دیکھا جائے تو آپ کی تمام عادات اور اخلاق بے مثال اور لائق اقتداء ہیں۔

اپنی تحریر کے اختصار کو ملحوظ رکھتے ہوئے ان میں سے ایک حدیث پاک ذکر کرتا ہوں۔ شمائل ترمذی میں اخلاق مصطفی ﷺ کے باب میں امام ترمذی ایک حدیث پاک نقل کرتے ہیں:

حضرت انس بن مالک خادم رسول رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں میں نے دس سال حضور ﷺ کی خدمت کی سعادت حاصل کی۔ اس عرصے میں کبھی بھی حضور علیہ سلام نے اف تک نہ کہا اور نہ ہی کسی کام کے نہ کرنے پر یہ فرمایا کہ تو نے یہ کام کیوں نہیں کیا۔ حضور علیہ السلام لوگوں میں سب سے زیادہ اچھے اخلاق والے تھے۔

اس حدیث کو پڑھنے کے بعد میں کچھ دیر تک یہ سوچتا رہا۔ اگر کوئی شخص اپنے زیر اثر آنے والے افراد کے ساتھ ایسا خوبصورت رویہ اپنائے۔ تو اس سنت کی پیروی سے وہ اپنے زیر اثر افراد کے دلوں میں اپنی محبت راسخ کرنے میں کامیاب ہو جائے گا اور زندگی خوشگوار ہو جائے۔ آئیے مل کر آج سے ان اخلاق حسنہ کو اپنے اندر پیدا کرنے کی کوشش کریں۔

حوالہ جات[+]

اپنا تبصرہ بھیجیں